Author: Ravi Magazine

Ford Logo

Employees in Ads put heart on Ford face

  The Ford Windstar commercial that spotlights the mothers among its engineers is among the best-liked car commercials measured since 1995 by Ad Track, USA...

sexual harassment of women in pakistan

Sexual Harassment of Women in Pakistan: Urdu Report by Nadia Umber Lodhi

جنسیہراسگی   حضرتآدمکیتخلیقکےبعدانکےدلبہلاوےکےلیےعورتیعنیاماںحواکیتخلیقکیگئی۔ حضرتآدمدنیامیںبھیجدیےگئیے۔ ہابیلقابیلکےجھگڑےسےشروعہونےوالیعورتکےحصولکیداستاںجاریہے۔بچپنمیںجنسیتشددکاشکارہونےوالیبچیاںزیادتیکےبعدموتکےگھاٹاتاردیجاتیہیں۔لیکناکثریتکامعاملہجنسیہراسگیتکہیرہتاہے۔یہبچیاںبڑےہونےکےبعدبھیاسعملسےگزرتیرہتیہیں۔آجمعاشرہخواندگیکیسطحکےلحاظسےتوترقیکررہاہےلیکنعورتکایہمسئلہجوںکاتوںہےپڑھیلکھیانپڑھسباسکاشکارہوتیہیں۔زیادہترزبانبندرکھتیہیں۔ فیکٹریوںمیںکامکرنےوالیغریبلڑکیاں،جاگیرداروںکےہاریوںکیعورتیں،ملازمتپیشہخواتین،نرسیں،گھروںمیںکامکرنےوالیاں،غرضیکہہرجگہعورتیںآسانشکارہیں۔پرائیعورتمردکےلیےایککھلوناہے۔دلبہلانےکاسامانہے۔جسکےلیےوہموقعتاکتارہتاہے۔انسانکیجبلتجسکےدو “سرے ” ہیں۔ایکسرےپہبھوکاوردوسرےسرےپہجنسہے انسانکواپنیاسفطرتسےمفرنہیںہے۔بہتعامساقاعدہہےجسمردسےبھیکوئیکامپڑےگاوہعورتکوچھیڑےگاضرور۔جتنیاسےجگہملےگیاتنیحدتکجاۓگا۔کیاعورتہوناکوئیجرمہےجسکیسزابنتِحواپاتیرہےگی۔جنسیہراسگیہرسطحپرہے۔نامورخواتینہوںیاعامعورتیں۔عورتکاوجودکشیشاوررعنائیسےبھرپورہے۔اسیلئیےاسلاماسےپردےمیںمقیدکرتاہےلیکنپردہبھیعورتکاتحفظنہیںکرپاتا۔اصلمسلئہسوچکاہے۔شعورکاہے۔ لیکندیگرناقابلحلمسائلکیطرحاسمسلئےکےسلجھنےکیبھیکوئیامیدنظرنہیںآتی۔ باندیاں ۔۔۔۔۔ مرےمالککیاہمباندیاںہیں میرےمالک کیاہمباندیاںہیں جوآگمیںجلاکرماردیجائیں ہموہجوانیاںہیں محبتکےنامپرجومسلدیجائیں ہموہکلیاںہیں ہوسکانشانہبناکر جنکےپرنوچلئےجائیں ہموہتتلیاںہیں جومصلحتکےنامپر قربانکردیجائیںہموہبیٹیاںہیں جوشرعیجائیدادسےمحرومکردیجائیںہموہبہنیںہیں میرےمالک کیوںہمباندیاںہیں...

Tauba tun Nasooh

Tauba tun Nasooh by Deputy Nazir Ahmed: Urdu Article by Nadia Umber Lodhi

توبتہ النصوح  ———————– توبتہ النصوح ڈپٹی نذیر احمد کا شہرہ آفاق اصلاحی ناول ہے۔نذیراحمد ایک مذہبی پس منظر رکھتے تھے لہذا انکے تمام ناول مقصدیتکے تحت لکھے گئےان کا اسلوب ہر ناول میں ایک جیسا ہے ۔ ان کیہر ہر سطر سے وعظ کا عنصر چھلکتا ہے۔ اکثر مقامات پر لمبیتقریریں ناول میں بور ریت پیدا کرتی دکھائی دیتی ہیں ۔لیکن چونکہان کا مقصد اصلا حی ہے لہذا یہ خامی قابل قبول ہے۔ یہ ناول موجودہنوجوان نسل کو اسلام پہ عمل کادرس دیتا ہے جو کہ لائق ۔ تحسینہے ۔ یہ ناول ایم اے۔اردو کے نصاُب کا حصہ ہے ایم اردو کے طالب علم ہونے کے باعث ہم نے بھی اپنے زمانہ ۔طالبعلمی میں اس کو باریک بینی سے پڑ ھا لیکن مرے اس مضمون کاڈپٹی نذیر احمد کے ناول سے کوئی تعلق نہین ہے اور نہ ہی یہمضمون ڈپٹی نذیر کے ناول کی پیروڈی ہے نہ ناول پر تنقید مقصد ہےبلکہ یہ مضمون اسلامی تعلیمات توبہ اور استغفار سے متعلق ہے نامکی یکسانیت کی وجہ سے یہ تمہید باندھی گئی۔ توبتہ النصوح سے مراد حتمی توبہ ہے ایسی توبہ جس کے بعد گناہکی طرف واپس لوٹنا ناممکن ہو ۔انسان خطا کا پُتلا ہے ۔ اپنے ماضیپر نظر دوڑائیے ۔ ہم بے شمار گناہ کر کے بھول چکے ہیں ۔ کچھایسے ہیں جو یاد ہیں جن پر کبھی کبھی اشک ۔ ندامت بہا لیتے ہیں ۔کچھ ایسے ہیں جو وقت کی خاک میں مل کر خاک ہوۓ ۔جن کے نام ونشاں بھی مٹ گئے لیکن وہ کراماً کاتبین کے رجسٹر میں درج ہیں یہگناہ ہمارے ساتھ اعمال کی گھٹری میں بندھ کر قبر میں جائیں گے ۔ان گناہوں پر زبانی تو ہم استغفار کر لیتے ہیں لیکن عملی طور پر انسے تائب نہیں ہوتے ۔ یہ مثال دور ِ حاضر کے حاجیوں پر خوبصادق آتی ہے ۔ بیت اللہ کی حاضری قسمت والوں کا نصیب بنتی ہے ۔گڑ گڑا کر اپنے گناہوں کے معافی مانگنے کے بعد کاش کہ ان گناہوںسے اجتناب بھی لازم ہو ۔ اگر یہ حاجی خود کو تبدیل کر کے اپنیاصلاح کر لیں تو شاید ہمارا آدھا معاشرہ سدھر جاۓ لیکن پھر وہیلذت ِ گناہ ۔ جانتا ہوں ثواب طاعت و زہد پر طبعیت ادھر نہیں آتی (غالب) یہ زندگی جس کا آج ہم حصہ ہیں عنقریب اس کی ڈور ہمارے ہا تھوںسے چھوٹنے والی ہے ۔ زندگی جو بے بندگی ہو ۔شرمندگی بن جایا کرتی ہے ۔ دائرہ اسلام میں داخل ہو نے والے ہر مسلمان کا پہلا فرض نماز ہے ۔ موذن دن میں پانچ دفعہ اللہ کے گھر کی طرف بلاتا ہے اور ہم میںسے اکثریت سنی ان سنی کر دیتی ہے ۔جو قدم اٹھاتے ہیں ان میںسے خشوع وخضوع اور نماز کا فیض بھی ہر کسی کے حصے میںنہیں آتا ۔ ایسا کیوں ہے ؟ ہماری عبادات ہمیں وہ نور کیوں نہیں دے پاتی ۔جو ملنا چاہئیے۔ نماز بے حیائی اور بری باتوں سے روکتی ہے تو پھر ہم رک کیوںنہیں پا تے ۔ کیونکہ کمی ہماری نماز میں ہے ۔ مسجد تو بنادی شب بھر میں ایماں کی حرات والوں نے  من اپنا پرانا پاپی ہے، برسوں میں نمازی بن نہ سکا اقبال  کہیں حرام کا لقمہ پیٹ میں ہے تو کہیں دھیان  دنیا میں ۔ کہیں نظر بے حیا ہے تو کہیں حقوق العباد سے غفلت ہے ۔ میر ا مالمیرا نہیں مرے رب کا دیا ہے ۔اسکے بندوں کا اس میں حق ہے مگرمیں تو اسے اپنا مال سمجھتا ہوں ۔اسکو اپنے اوپر خرچ کر تا ہوں ۔کسی کی ضرورت سے مری برانڈنگ زیادہ اہم ہے ۔جس ملک میںلوگ بھوک سے مجبور ہو کے خو کشی کریں ۔ لڑکیاں پیٹ کی آگبجھا نے کے لیے عزتیں نیلام کریں ۔وہاں میں ہزاروں روپے ایکوقت کی ہو ٹلنگ پہ خرچ کرتا ہوں ۔اور پھر مجھے دعوی ہے کہ میںمسلمان ہوں ۔ اپنےرسول کا امتی ہوں –سب سے بہترین صدقہ بھوکےکو روٹی کھلانا ہے ۔ جہنم میں جب مجرموں سے پو چھا جاۓ گا کہ تمہیں کیا چیز جہنممیں لائی ؟ تو وہ کہیں گے ...

Jaisi Rooh, Waisay Farishte: Urdu article by Nadia Umber Lodhi

جیسی رُوح ویسے فرشتے ——————- انسان کا دنیا میں آنا حکم ربی ہے ۔ جس میں اس کا ذاتی ارادہ شاملنہیں ہے ۔ زندگی گزارنے کے لیے وہ مقدر کا پابند ہے ۔ آزادی ارادہاس کی محدود ہے ۔ گلے میں صلیب مقدر ہے ۔ پھر جنت کا حصولکیسے ممکن ؟  ہر انسان کے سامنے دو راستے ہیں ۔ پہلا قدم وہ خیر یا شر کے تابعاٹھاتا ہے ۔ پھر اس راستے پہ آگے بڑ ھتا ہے ۔ اب اگر برائی کا راستہتو ضمیر کی آواز سنتا ہے کچھ پل کے لیے سوچتا ہے پھر یا توواپس پلٹ آتا ہے  یا پھر سنی ان سنی کر کے آگے بڑ ھ جاتا ہے ۔آہستہ آہستہ اس کے قدموں میں روانی آجاتی ہے ۔ پھر وہ ایک ایسےمقام پر پہنچ جاتا  ہے جہاں سے پلٹنا اسکے لئے ناممکن  ہو جا تا ہے ۔ دنیا کیرنگینیاں اسے اپنے دامن میں سمیٹ لیتی ہیں ۔ موت سے آگاہ تو ہےلیکن دلی دور است ۔   لیجئیے !  اچانک بج گیا  موت کا نقارہ ۔  اس کو  کسی جان لیوا مرض نے آگھیرا ۔ ستر اسی سال دنیا پہ گزار کر بچوں کے بچوں کیشادیاں کرکے بھی جینے کی خواہش آخر  ہے کیوں ؟  کیونکہ آخرت کی تیاری نہیں ہے کیونکہ مال و متاع گھر  اور اپنےکمرے سے بے حد محبت  ہے ۔ اب آہستہ آہستہ بھولے بسرے گناہیاد آنے لگے ۔ اپنے اعمال منہ چڑانے لگے ۔ اب قبر کی وحشتڈرانے لگی ۔ اب آنکھ سے آنسو بہنے لگے لیکن وقت ختم ہو نےوالا  ہے ۔ اب مدت نہیں ہے باقی ۔  بیماری جھیلتے جھیلتے شکل بگڑ گئی ۔ جسم کا گوشت گُھل گیا ۔رنگ جل گیا ۔ پہچانے سے نا پہچانا جاۓ ۔ لیجئے عزرائیل موت کےہر کاروں کے ساتھ آپہنچے ۔ بدصورت شکلوں والے فرشتے ،بدبودار جہنمی کفن لیے ۔ دیکھتے ہی لرزنے لگا تڑپنے  لگا ۔ فرشتےآگے بڑ ھے اس کی روح بدن میں دوڑنے چھپنے لگی ۔ کھینچیفرشتوں نے اس کی روح اسکے پاؤں  میں سے ۔ ناقابل بیان اذیتسے سانس کی آوازیں تیز ہو نے لگی۔  بیقراری سے ایڑ یاں رگڑ نےلگا ۔ کبھی ٹانگ کھینچے کبھی سر جھٹکے کئی گھنٹے گزر گئے ۔ ابجان اٹک گئی ہنسلی کی ہڈی میں ۔ نرخرے  کی آوازیں بلند ہونے لگی۔ گھر والے کفن دفن کی تیاریوں میں لگ گئے ۔  روح کو لڑتےلڑتےچھپتے چھپتے کئی گھنٹے گزر گئے ۔ فرشتوں نے زور سےکھینچا۔ لگایا آخری جھٹکا ۔ روح نکلی بدن سے ۔ انکھیں اوپر جا لگیجہاں روح گئی ۔ ابھی چھت تک بھی بلند نہ ہوئی تھی حکم آیا اسملعون کو زمین کی سات تہوں کے نیچے “سجین “بد روحوں کے دفترمیں داخل کر دو ۔ جیسے اعمال ویسی موت ۔جیسی روح ویسےفرشتے ۔ نادیہ عنبر لودھی  اسلام آباد