:::::::::::::::::: To the reverence of Word, which makes sacred the tip of a Pen :::::::::::::::::: :::::::::::::::::::::::::::::::::::::::::::: لفظ کی حرمت کے نام ، جو نوک ِ قلم پر احرام بندھتا ہے :::::::::::::::::::::::::::::::::::::::::::

Ghazal by Nadia Umber Lodhi

Urdu Ghazal by Ali Ayaz

ایک شام حسیں ہو ہو ساتھ تمھارا، اک طرف یہ آرزو اک طرف جگ سارا۔ یہ ظلم ہے کہ ہمیں تم نہیں نصیب، یہ کیسی...

mirza ghalib

Kamal-e-Ghalib: Urdu Article on Mirza Ghalib by Nadia Umber Lodhi

    کمال  ِ غالب – نادیہ عنبر لودھی  کے قلم سے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مرزاغالب کا نام کسی تعارف کا محتاج نہیں ہے ۔ اردو ادب  میں غالبکی شاعری ہمیشہ تروتازہ ہی رہے گی ۔  ۔ غالب نے لفظوں سے کھیل کر تخیلاتی تصویریں بنائی ۔غالب نےخالص اردو لغت کا سہارا لیا۔ غالب کی شخصیت اور فن کثیر الجہتیہے۔ان کی انفرادیت اور عظمت اتنے پہلوؤں میں جلوہ گر ہوئی  ہےکہ اس کا احاطہ کسی انسان کے بس کی بات نہیں ۔ غالب نے اپنی فنی زندگی کا آغاز فارسی شعر گوئی سے کیا ۔ کلام کےتین حصے فارسی اور ایک حصہ اردو شاعری پر مبنی ہے۔میرزا نےفارسی شاعر بیدل کو تقلید کے لئے چنا ۔ —— “طرز بیدل میں ریختہ لکھنا  ..     اسد اللہ خاں قیامت ہے“ ————————— پھر غالب نے شاعری کے دوسرے دور میں قدم رکھا ۔ یہاں اردو شعرکہتے ہوۓ فارسی کے الفاظ  اردو شاعری کی دلکشی میں اضافہکرتے دکھائی دیتے ہیں ۔ نازک خیالی بدستور موجود ہے۔مگر اسکے ساتھ ساتھ عقلیت ، معنویت، اور جذبہ کی شدت سر چڑ ھ کربولتی ہے۔ غالب یہاں تنگناۓ غزل کو وسعت بخشتے نظر آتے ہیں ۔یہاں وہ کبھی تصوف میں پناہ ڈھونڈ تے ہیں ۔ تو کبھی مذہب میں امانتلاش کر تے ہیں ۔ کبھی یاسیت کے گہرے سمندر میں  گرتے گرتے بچنے کے لئے ہاتھپاؤں مارتے ہیں ۔ اور کبھی خوابوں ہی خوابوں میں آرزوؤں کی جنتتلاش کرتے ہیں ۔ اس دور کی انفرادیت غالب کی بے چینی ہے ۔ وہآسمان کی تلاش میں ضرور نکلے لیکن زمین نے انہیں خود سے جدانہ کیا ۔ انہوں نے ولی بنا چاہا لیکن دنیا تمام تر رنگینوں کے ساتھدامن گیر رہی – ———- “یہ مسا ئل تصوف یہ ترا بیان غالب  … تجھے ہم ولی سمجھتے جو نہ با دہ  خوار ہو تا“ —– محبت کاروائتیی  مضمون جب غالب کے قلم سے چھوتا ہے تو ایکایسے شخص کی محبت بن جاتا ہے جو خوددار بھی ہے انا پرست بھی ۔ وہ افلاطونی محبت کا قائل نہیں ۔ —————— “کہوں کس سے میں کہ کیا ہے شب ۔ غم بری بلا ہے  .....

phone in rice

How to Save a Wet Phone Using Rice!

  Most phones now come with a degree of waterproofing, so if you accidentally spill your drink over your device, it’s not a disaster. However,...

kohinoor power

Woh Tughaafil Tera: Satire Article on Electricity by Nadia Umber Lodhi

Woh Tughaafil Tera: Satire Article on Electricity by Nadia Umber Lodhi (وہ تغافل تیرا (طنزیہ اور مزاحیہ  مضمون ) یادش بخیر  بجلی نظر اگر آجاۓ تو کلمہ شکر ادا کیجئے نہیں تو بے کار بیٹھ رہئیے۔ اکثر عوام الناس کوبجلی کا رونا روتے دیکھا گیا ہے اور یہ پاکستان کے موجودہ مسائل میں سے  سب سے بڑامسلۂ بن چکا ہے ہر کوئی شاکی نظر آتا ہے لیکن ہر شے کی طرح سے بجلی کے جانے اورآنے سے معمولات زندگی میں جو ارتعاش پیدا ہو تا ہے وہ دیکھنے سے تعلق رکھتا ہے۔ ازلیسست لوگ بھی آمد بجلی کے ساتھ اٹین شن ہو جاتے ہیں لیجئے کچھ استری سنبھال بیٹھے۔ کچھ ٹیلی وژن کے آگے براجمان ہوۓ۔ بچاری خاتون خانہ بھی اپنا بھاری ڈیل ڈول سنبھالےکچن کی طرف روانہ ہوئیں مشینی دور نے جہاں بے شمار فائدے دیے وہاں مصالحہ جاتپیسنے کا آرام بھی ہے اب یہ بارہ من کی دھوبن یہی فریضہ انجام دیں گی اور اس کے لئےبجلی بے حد ضروری ہے۔ ہمارے ملک میں خواتین کی کثیر تعداد سستی کاہلی کی وجہ سےموٹاپے کا شکار ہے بجلی آنے کی صورت میں ان کو بھی چار و نا چار حرکت کرنی پڑ تی ہےلیں کچھ فائدہ تو ہوا لوڈ شیڈ نگ کا۔ اب ایک طبقہ نو جوان نسل کا ہے جن میں کچھ ادھیڑ عمراور کچھ بزرگوار شہری بھی شامل ہیں بجلی کے آتے ہی یہ بھی متحرک ہو نا اپنا فرضسمجھتے ہیں لیکن صرف ہاتھوں اور آنکھوں سے۔ یعنی نیٹ کا استعمال۔ کسی تنہائی گزیدہ کوچیٹنگ کر نی ہے۔ کسی لکھاری کو ای میل چیک کر نی ہے پوسٹ لگانی ہے کسی بزرگحضرت کو آنکھیں ٹھنڈی کر نی ہیں کسی پڑھائی سے عاجز نوجوان طالب علم یا طالبہ کو وقتگزارنا ہے لیجئے یہ سب تو مصروف ہو گئے۔ راوی چین ہی چین لکھ رہا تھا کہ بجلی چلی گئی تو معمول زندگی سرد پڑ گیا اچانک بجلیغائب ہو نے پہ واپڈا اور حکومت دونوں کی شان میں قصیدہ گوئی شروع ہو گئی لیکن فطرتانسانی کو تو چاہئیے تنوع۔ بے زار ہو کر بجلی کا پیچھا چھوڑا لعنت بھجی اور خاتون خانہلگی ہاتھ والا پنکھا عرف پکھی جھلنے۔ کچھ مرد حضرات اخبار لگے چاٹنے۔ کچھ گرمی کےستاۓ نہانے چل دئیے۔ فلیٹوں کے کابک میں بند خواتین باہر نکلی اور گروپ میں بیٹھ کراپنے پسندیدہ کام غیبت میں جڑ گئی۔ بچے بھی کارٹون کا پیچھا چھوڑ کر کھیلنے لگے۔لیجئیے کتنے فوائد ہیں بجلے جانے کےپنکھیاں بنانے والوں کا سامان بکنے لگا۔جنریٹر،بیٹریاں یو ۔پی ۔ایس کا کاروبار چل نکلا۔ ٹیلی ویژن کمپیوٹر اور سمارٹ فون سے وقتیدوری کے صحت پہ اچھے اثرات پڑنے لگے  ہے نا فوائد  لوڈ شیڈ نگ کے ۔ مان گئے نا۔ ناگڈ نادیہ عنبر لو دھی اسلام آباد, پاکستان     

Ghazal by Nadia Umber Lodhi

Ghazal by Nadia Umber Lodhi

کیوں میں بار ِدگر جاؤں پھر سے اس کے در جاؤں تجھ آنکھوں سے جہاں دیکھوں بے رنگی سے ڈر جاؤں تُو چاہے تو جی...