Author: Ravi Magazine

Jaisi Rooh, Waisay Farishte: Urdu article by Nadia Umber Lodhi

جیسی رُوح ویسے فرشتے ——————- انسان کا دنیا میں آنا حکم ربی ہے ۔ جس میں اس کا ذاتی ارادہ شاملنہیں ہے ۔ زندگی گزارنے کے لیے وہ مقدر کا پابند ہے ۔ آزادی ارادہاس کی محدود ہے ۔ گلے میں صلیب مقدر ہے ۔ پھر جنت کا حصولکیسے ممکن ؟  ہر انسان کے سامنے دو راستے ہیں ۔ پہلا قدم وہ خیر یا شر کے تابعاٹھاتا ہے ۔ پھر اس راستے پہ آگے بڑ ھتا ہے ۔ اب اگر برائی کا راستہتو ضمیر کی آواز سنتا ہے کچھ پل کے لیے سوچتا ہے پھر یا توواپس پلٹ آتا ہے  یا پھر سنی ان سنی کر کے آگے بڑ ھ جاتا ہے ۔آہستہ آہستہ اس کے قدموں میں روانی آجاتی ہے ۔ پھر وہ ایک ایسےمقام پر پہنچ جاتا  ہے جہاں سے پلٹنا اسکے لئے ناممکن  ہو جا تا ہے ۔ دنیا کیرنگینیاں اسے اپنے دامن میں سمیٹ لیتی ہیں ۔ موت سے آگاہ تو ہےلیکن دلی دور است ۔   لیجئیے !  اچانک بج گیا  موت کا نقارہ ۔  اس کو  کسی جان لیوا مرض نے آگھیرا ۔ ستر اسی سال دنیا پہ گزار کر بچوں کے بچوں کیشادیاں کرکے بھی جینے کی خواہش آخر  ہے کیوں ؟  کیونکہ آخرت کی تیاری نہیں ہے کیونکہ مال و متاع گھر  اور اپنےکمرے سے بے حد محبت  ہے ۔ اب آہستہ آہستہ بھولے بسرے گناہیاد آنے لگے ۔ اپنے اعمال منہ چڑانے لگے ۔ اب قبر کی وحشتڈرانے لگی ۔ اب آنکھ سے آنسو بہنے لگے لیکن وقت ختم ہو نےوالا  ہے ۔ اب مدت نہیں ہے باقی ۔  بیماری جھیلتے جھیلتے شکل بگڑ گئی ۔ جسم کا گوشت گُھل گیا ۔رنگ جل گیا ۔ پہچانے سے نا پہچانا جاۓ ۔ لیجئے عزرائیل موت کےہر کاروں کے ساتھ آپہنچے ۔ بدصورت شکلوں والے فرشتے ،بدبودار جہنمی کفن لیے ۔ دیکھتے ہی لرزنے لگا تڑپنے  لگا ۔ فرشتےآگے بڑ ھے اس کی روح بدن میں دوڑنے چھپنے لگی ۔ کھینچیفرشتوں نے اس کی روح اسکے پاؤں  میں سے ۔ ناقابل بیان اذیتسے سانس کی آوازیں تیز ہو نے لگی۔  بیقراری سے ایڑ یاں رگڑ نےلگا ۔ کبھی ٹانگ کھینچے کبھی سر جھٹکے کئی گھنٹے گزر گئے ۔ ابجان اٹک گئی ہنسلی کی ہڈی میں ۔ نرخرے  کی آوازیں بلند ہونے لگی۔ گھر والے کفن دفن کی تیاریوں میں لگ گئے ۔  روح کو لڑتےلڑتےچھپتے چھپتے کئی گھنٹے گزر گئے ۔ فرشتوں نے زور سےکھینچا۔ لگایا آخری جھٹکا ۔ روح نکلی بدن سے ۔ انکھیں اوپر جا لگیجہاں روح گئی ۔ ابھی چھت تک بھی بلند نہ ہوئی تھی حکم آیا اسملعون کو زمین کی سات تہوں کے نیچے “سجین “بد روحوں کے دفترمیں داخل کر دو ۔ جیسے اعمال ویسی موت ۔جیسی روح ویسےفرشتے ۔ نادیہ عنبر لودھی  اسلام آباد 

banksy

Zinda Badast Murda: Urdu Article by Nadia Umber Lodhi

زندہ بدست مردہ – نادیہ عنبر لودھی ………………… بہت عرصہ پہلے مرزا فرحت اللہ بیگ نے ایک مضمون مردہ بدستزندہ لکھا تھا ۔ جس میں انہوں نے ایک...

Ghazal by Nadia Umber Lodhi

Urdu Ghazal by Ali Ayaz

ایک شام حسیں ہو ہو ساتھ تمھارا، اک طرف یہ آرزو اک طرف جگ سارا۔ یہ ظلم ہے کہ ہمیں تم نہیں نصیب، یہ کیسی...

mirza ghalib

Kamal-e-Ghalib: Urdu Article on Mirza Ghalib by Nadia Umber Lodhi

    کمال  ِ غالب – نادیہ عنبر لودھی  کے قلم سے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مرزاغالب کا نام کسی تعارف کا محتاج نہیں ہے ۔ اردو ادب  میں غالبکی شاعری ہمیشہ تروتازہ ہی رہے گی ۔  ۔ غالب نے لفظوں سے کھیل کر تخیلاتی تصویریں بنائی ۔غالب نےخالص اردو لغت کا سہارا لیا۔ غالب کی شخصیت اور فن کثیر الجہتیہے۔ان کی انفرادیت اور عظمت اتنے پہلوؤں میں جلوہ گر ہوئی  ہےکہ اس کا احاطہ کسی انسان کے بس کی بات نہیں ۔ غالب نے اپنی فنی زندگی کا آغاز فارسی شعر گوئی سے کیا ۔ کلام کےتین حصے فارسی اور ایک حصہ اردو شاعری پر مبنی ہے۔میرزا نےفارسی شاعر بیدل کو تقلید کے لئے چنا ۔ —— “طرز بیدل میں ریختہ لکھنا  ..     اسد اللہ خاں قیامت ہے“ ————————— پھر غالب نے شاعری کے دوسرے دور میں قدم رکھا ۔ یہاں اردو شعرکہتے ہوۓ فارسی کے الفاظ  اردو شاعری کی دلکشی میں اضافہکرتے دکھائی دیتے ہیں ۔ نازک خیالی بدستور موجود ہے۔مگر اسکے ساتھ ساتھ عقلیت ، معنویت، اور جذبہ کی شدت سر چڑ ھ کربولتی ہے۔ غالب یہاں تنگناۓ غزل کو وسعت بخشتے نظر آتے ہیں ۔یہاں وہ کبھی تصوف میں پناہ ڈھونڈ تے ہیں ۔ تو کبھی مذہب میں امانتلاش کر تے ہیں ۔ کبھی یاسیت کے گہرے سمندر میں  گرتے گرتے بچنے کے لئے ہاتھپاؤں مارتے ہیں ۔ اور کبھی خوابوں ہی خوابوں میں آرزوؤں کی جنتتلاش کرتے ہیں ۔ اس دور کی انفرادیت غالب کی بے چینی ہے ۔ وہآسمان کی تلاش میں ضرور نکلے لیکن زمین نے انہیں خود سے جدانہ کیا ۔ انہوں نے ولی بنا چاہا لیکن دنیا تمام تر رنگینوں کے ساتھدامن گیر رہی – ———- “یہ مسا ئل تصوف یہ ترا بیان غالب  … تجھے ہم ولی سمجھتے جو نہ با دہ  خوار ہو تا“ —– محبت کاروائتیی  مضمون جب غالب کے قلم سے چھوتا ہے تو ایکایسے شخص کی محبت بن جاتا ہے جو خوددار بھی ہے انا پرست بھی ۔ وہ افلاطونی محبت کا قائل نہیں ۔ —————— “کہوں کس سے میں کہ کیا ہے شب ۔ غم بری بلا ہے  .....