Urdu Ghazal by Kawish Abbasi

Urdu Ghazal by Kawish Abbasi 


 چشمِ نَم بے اثَر بھی ہوتی ہے
 کِشتِ دِل بے ثمَر بھی ہوتی ہے

 آدمی آدمی نہیں رَہتا
 بے حِسی کارگر بھی ہوتی ہے

 زندگی کو طویل ہی مت جان
 زندگی مختصَر بھی ہوتی ہے

 ہمیں یکسر ہی بے خبَر نہ سمَجھ
 ہمیں کچھ کچھ خبَر بھی ہوتی ہے

 قندِ جاں ہے سُخَن مگر اِس سے
 زندگی تلخ تر بھی ہوتی ہے

 بولو کاوِش کہ بعض موقعوں پر
 خامشی فِتنہ گر بھی ہوتی ہے

Comments

comments

You may also like...