غزل کاوش عباسی – Urdu Ghazal by Kawish Abbasi

women fetching water

غزل

 

چھوڑی ہر اِک خوش انجمن ہم نے
غم چُنا اور اکیلا پن ہم نے

اشک ِ سوزاں سے سبز حال رکھا
یار کی یاد کا چمن ہم نے

سب نے چھوڑا جسے بہ خوف ِزیاں
خوں سے سینچی وہی لگن ہم نے

سینوں میں ہر گھڑی گڑی دیکھی
غم کی چُبھتی ہوئی کرن ہم نے

پہلے پیاروں کو دِل سے دُور کیا
پالی پھر ہجر کی جلن ہم نے

دوش و فردا ہیں سب رچے جِس میں
وہ کیِا اختیار فن ہم نے

ایسے سب ہم سے دُور دُور چلے
جیسے اوڑھا تھا اک کفن ہم نے

کبھی پرکھی نہ رَو زمانے کی
کاٹی عُمر آپ میں مگن ہم نے

خود سے کہتے رہے جو ہم کاوِش
نہ سُنا جگ میں وہ سُخن ہم نے

.

Comments

comments

You may also like...