Noor Jehan sings Faiz Ahmad Faiz کلام فیض، نور جہاں کی آواز میں


Faiz Ahmad Faiz with Alys Faiz

Faiz Ahmad Faiz with Alys Faiz

 

Noor Jehan, often called Mallika Taranum (The Queen of Melody) in Pakistan, once mentioned in an interview that Faiz Ahmed Faiz in a mehfil asked her to sing from his most popular poems Raqeeb Se.

Noor Jehan was hesitant how she can sing without a tune composed. Faiz insisted to just create any extempore melody. Obliging the great poet, she performed it without any background music instruments.

Faiz loved the poem so much that he said I have given this poem to Noor Jehan, as after her singing, his own recitation will not look good at all.

Download the MP3 version of this beautiful song below.

 

Raqeeb Se – Kalam Faiz Ahmed Faiz in Voice of Noor Jehan [Download MP3]

 

Also download MP3 Kalam of Faiz Ahmed Faiz in voice of Tina Sani as well as Zia Mohyeddin recites Faiz Ahmad Faiz Poetry (Faiz Sahab Ki Mohabbat Mein)

 

Raqeeb Se in Urdu below:

رقیب سے ۔ ۔ ۔ ۔
آ کہ وابستہ ہیں اُس حسن کی یادیں تجھ سے
جس نے اِس دل کو پری خانہ بنا رکھا ہے
جس کی اُلفت میں بُھلا رکھی تھی دنیا ہم نے
دہر کو دہر کا افسانہ بنا رکھا ہے

آشنا ہیں تیرے قدموں سے وہ راہیں جن پر
اس کی مدہوش جوانی نے عنایت کی ہے
کارواں گزرے ہیں جن سے اُسی رعناٴی کے
جس کی ان آنکھوں نے بے سُود عبادت کی ہے

تجھ سے کھیلی ہیں وہ محبوب ہواٴیں جن میں
اس کے ملبوس کی افسردہ مہک باقی ہے
تجھ پہ برسا ہے اس بام سے مہتاب کا نور
جس میں بیتی ہوٴی راتوں کی کسک باقی ہے
تُو نے دیکھی ہے وہ پیشانی وہ رُخسار وہ ہونٹ
زندگی جن کے تصور میں لُٹا دی ہم نے
تجھ پہ اُٹھی ہیں وہ کھوٴی ہوٴی ساحر آنکھیں
تجھ کو معلوم ہے کیوں عمر گنوا دی ہم نے

ہم پہ مشترکہ ہیں احسان غمِ اُلفت کے
اِتنے احسان کہ گنواٴوں تو گِنوا نہ سکوں
ہم نے اس عشق میں کیا کھویا ہے کیا پایا ہے
جُز تیرے اور کو سمجھاٴوں تو سمجھا نہ سکوں

عاجزی سیکھی غریبوں کی حمایت سیکھی
یاس و حرمان کے دُکھ درد کے معنی سیکھے
زیر دستوں کے مصاٴیب کو سمجھنا سیکھا
سرد آہوں کے رُخِ زرد کے معنی سیکھے

جب کہیں بیٹھ کے روتے ہیں وہ بیکس جن کے
اشک آنکھوں میں بِلکتے ہوٴے سو جاتے ہیں
ناتوانوں کے نوالوں پہ جھپٹتے ہیں عقاب
بازو تولے ہوٴے منڈلاتے ہوٴے آتے ہیں

جب بھی بِکتا ہے بازار میں مزدور کا گوشت
شاہراہوں پہ غریبوں کا لہو بہتا ہے
آگ سی سینے میں رہ رہ کے اُبلتی ہے نہ پوچھ
اپنے دل پر مجھے قابو ہی نہیں رہتا ہے

 

 

SUGGESTED FOR YOU

Comments

comments

You may also like...

Leave a Reply

Your email address will not be published.