Aaway ka Aawa: Urdu Article by Nadia Umber Lodhi

poor kid in pakistan

آوے کا آوا

——-

مملکت خدادِ پاکستان کی کیا بات ہے –آوے کا آوا ہی بگڑاہوا ہے – 

بارش کا آنا عذاب ہے اور نا آنا بھی عذاب ہے – ذہنیمعذور چوروں کا منہ چڑانا دردناک موت کو دعوت دیناہے – ہاں بڑے چوروں کے لیے یہاں کھلی معافی ہے –اب چور تو ہر میدان میں ہیں –برینڈز کے نام پر لان کاجوڑا ہزاروں روپے میں بیچنے والے کیا ہیں – ناجائزمنافع کمانے والے کیا چور نہیں ہیں ؟تعلیمی اداروں  کےنام پر ماں باپ کولوٹنےوالےکالجز،یونیورسٹیز ،اکیڈمیز اور اسکول کیا کررہے ہیں ؟ 

جن خواتین کی شادیاں نہیں ہو پاتیں وہ گلی محلے کےپرائیویٹ اسکولوں میں استانیاں لگ جاتی ہیں –ننھےکچے ذہنوں کی آبیاری ان ناخواندہ ہاتھوں میں دے دیجاتی ہے – پھر پرائیویٹ ایم –اے کر لیتی ہیں اورسرکاری اسکولوں میں نوکری حاصل کرلیتی ہیں یہاں تووارے نیارے ہوجاتے ہیں – پرائیوٹ اسکول والے کام لےلے کے ان کی گت بنا دیتے ہیں چنانچہ باقی زندگی یہآرام فر ماتی ہیں اور ماضی کی تھکن اتارتی ہیں – 

اب مہنگے پرائیویٹ اسکولوں والے فیسسز کے نام پربھاری رقم بٹورتے ہیں – پھر شام میں اکیڈمیز میںٹیوشن کا سلسلہ بھی جاری رہتا ہے – 

کالجز والے بھی کسی سے کم نہیں ہیں – ان کی اکیڈمیزانٹری ٹسٹ کی تیاری کے لیے موسم گرما کی چھٹییوںسے خوب فائدہ اٹھاتی ہیں – بچوں کے والدین چھٹیوںکی فیس ادا کرتے ہیں – اور بچے گھر میں ماؤں کا دماغکھاتے ہیں – آج کے بچوں کا اہم مسلۂ فوڈ چوزنگ بھیہے جو کہ ماؤں کے لیے ایک الگ درد سر ہے – اب کالجکے اسٹوڈنٹ تو گھر بیٹھے ہیں – انٹری ٹسٹ دینے والےجو کہ مستقبل کے ڈاکٹرز ہیں – خطیر رقم دے کر اناکیڈمیز میں داخلہ لیتے ہیں – دور دراز علاقوں کےرہائشی ہاسٹلوں کے اخراجات بھی سہتے ہیں –انٹریٹسٹ کی تیاری کروائی جاتی ہے پھر تین ماہ سولی پےلٹک کے انتظار کیا جاتا ہے – 

اب جن کو داخلہ مل گیا ان کا تو بیڑا پار ہوا – باقی کیاکریں ؟

یونیورسٹیز کے ایڈمیشن اور انٹری ٹسٹ تو جون جولائیاگست میں ہو چکے – ستمبر سے بی –ایس کی کلاسزشروع ہو گئی – 

اب یہ بچارے اگلے سمسٹر کا انتظار کریں گے –

پاکستان میں سب سے منافع بخش کاروبار تعلیمی ادارےکا قیام ہے – اس کے لیے کسی ڈگری کی ضرورت نہیںہے بس پیسہ جیب میں ہو تو چاندی ہی چاندی ہے –اسکول کھولیے کالج بنائیے پرائیویٹ یونی ورسٹیسجائیے – پیسے کمائیں –مزے اڑائیں 

اس طریقے پر عمل کرکے آپ بلیک منی کو وہائٹ بھیکرسکتے ہیں اور اپنی جہالت کو بھی چھپا سکتے ہیں – 

یہ سب سے زیادہ منافع بخش کاروبار ہے –جس میںنقصان کا کوئی اندیشہ نہیں ہے – 

—-

نادیہ عنبر لودھی 

اسلام آباد 

Comments

comments

You may also like...