Ghazal by Nadia Umber Lodhi


ghazal

غزل

دار پر حد سے سِوا یار آئی
اس بشر کو تو وفا یاد آئی

گُل کی خوشبو تھی جہاں پر ناپید
اُس گلی باد ِ صبا یاد آئی

ُبجھ گئی شب کو اگر خواہش ِدل
چارہ گر تجھ کو دوا یاد آئی

چلتے چلتے جو جلاتے گئے دیپ
ظلمتِ شب کی ادا یاد آئی

جیتے جیتے رہے عنبر مدہوش
مرنے والے کو قضا یاد آئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نادیہ عنبر لودھی
اسلام آباد
پاکستان


Comments

comments

You may also like...