Meri Khamshi Ko Zibaan Naa Do: Urdu Poem by W.F Kareem

Meri Khamshi Ko Zibaan Naa Do: Urdu Poem by W.F Kareem

 

میری خامشی کو زباں نہ دو

ابھی رہنے دو

ابھی رہنے دو

میرے غم کا تم کو غم ہے کیا

ابھی گرنے دو

ابھی سہنے دو

اس ظلم و ستم کے دریا میں

ابھی بہنے دو

ابھی رہنے دو

ابھی ہاتھ نہ تھامو میرا تم

ابھی تنہا تنہا رہنے دو

کبھی میں بھی گرکے اٹھوں گی

کبھی تولوں گی اُن باتوں کو

پھر تول کے میں بھی بولوں گی

ابھی سننے دو

ابھی رہنے دو

 

««««  التجا کریم »»»»

 

 

 

Facebook Comments

You may also like...