Ghazal by Kawish Abbasi

غزل –  کاوش عباسی

آ پہنچا انتظار ہی گَھٹ کر دنوں تلک
جاں بھی نکل کے سِینے سے آئی لبوں تلک

اے جان ِ جاں گواہ یہ حال ِ تباہ ہے
چاہیں گے یونہی ہم تمہیں مرتے دَموں تلک

اے دوست تمتماہٹیں تیرے یقین کی
اے کاش جِھلملائیں مِرے وسوسوں تلک

مجھ کو تو جیسے درد کی مشعل بنا دیا
یہ غم کی آنچ یوں تو ہے پہنچی سبھوں تلک

بہروپ یہ بھی تھا کہ مِرے حالِ زار پر
حیرانیاں بہت تھیں مِرے ہمدموں تلک

کاوش تپاں ہیں میرے ہی سوزِ وجود سے

خوابوں کی صبح سے مِری غم کی شبوں تلک

 

 

Comments

comments

You may also like...