Woh Jis Ki Deed Mai Lakhon Musaratin Pinhaan: Abida Parveen sings Faiz Ahmed Faiz

Faiz Ahmad Faiz with Alys Faiz

Faiz Ahmad Faiz with Alys Faiz

 

Here is a Faiz Ahmed Faiz’s extremely early poem ‘Ek Rahguzar Par’, which despite being his very early poem manifests his command over weaving the most beautiful patterns of words into a verse. No other poet comes close to Faiz in Romanticism, and this poem unsurprisingly remains the most graceful expression of beauty of beloved. Unlike other post, I did not dare to do an English translation, as it simply does not do justice to what is described here.

To make it more irresistible, there is a exceptional rendition by the Queen of Sufi Music, download below. Produced with big thanks and permission of TheSufi.com

 

 

Abida Parveen Sings Faiz – Woh Jis Ki Deed Mai Laakhon Musaratain [Download MP3]

وہ جس کی دید میں لاکھوں مسرتیں پنہاں
وہ حُسْن جسکی تمنا میں جنتیں پنہاں
ہزار فتنے تہ پاے ناز ، خاک نشین
ہر اک نگاہ خمار شباب سے رنگین
 
شباب ، جس سےتخیل پہ بجلیاں برسیں
وقار ، جسکی رفاقت کو شوخیاں ترسیں
اداے لغزش پا پرقیامتیں قربان
بیاض رخ پہ سحر کی صبحاتیں قربان
سیاہ زلفوں میں وارفتہ نکہتوں کا ہجوم
طویل راتوں کی خوابیدہ راحتوں کا ہجوم
وہ آنکھ جس کے بناؤ پہ خالق اتراے
زباں شعر کو تعریف کرتے شرم آئے
وہ ہونٹ فیض سے جنکے بہار لالہ فروش
بہشت و کوثر و تسنیم و سلسبیل بدوش
گُداز جسم ، قبا جس پہ سج کے ناز کرے
دراز قد جسے سرو سہی نماز کرے
غرض وہ حُسْن جو محتاج وصف و نام نہیں
وہ حُسْن جسکا تصور بشر کا کام نہیں
کسی زمانے میں اِس راہ گزر سے گزرا تھا
بصد غرور و تجمل ادھر سے گزرا تھا
اور اب یہ راہ گزر بھی ہے دلفریب و حَسِین
ہے اسکی خاک میں کیف شراب و شعر مکین
ہوا میں شوخی رفتار کی ادیایں ہیں
فضا میں نرمی گفتار کی صدائیں ہیں
غرض وہ حُسْن اب اِس راہ کا جز و منظر ہے
نیاز عشق کو اک سجدہ گاہ میسر ہے
وہ ہونٹ فیض سے جن کے بہار لالہ فروش
بہشت و کوثر و تسنیم و سلسبیل بدوش
 
 
SUGGESTED FOR YOU

Comments

comments

You may also like...